loader image

پاکستان کی مزید 5 یونیورسٹیاں ٹائمز یونیورسٹی رینکنگ میں شامل

کووڈ لاک ڈاؤن اور پابندیوں کے درمیان، پاکستان اعلیٰ تعلیم کی عالمی دوڑ میں ایک ابھرتا ہوا ستارہ دکھائی دیتا ہے اور اگلے سال کی پیش گوئی اسے خطے میں اپنے روایتی حریف بھارت سے آگے رکھتی ہے۔

ٹائمز ہائر ایجوکیشن کی جانب سے یونیورسٹیز کی درجہ بندی کی سالانہ اشاعت میں نوٹ کیا گیا ہے کہ پاکستان اپنی تدریس، سیکھنے، تحقیق اور دیگر تعلیمی سہولیات کے معیار کے لحاظ سے دنیا کی سب سے تیزی سے بہتری کی جانب بڑھنے والی قوم بن کر ابھرا ہے۔

لندن میں قائم ہائر ایجوکیشن رینکنگ میگزین میگزین نے کہا ہے کہ خاص طور پر، تحقیقی حوالہ جات اور تدریسی میدان میں پاکستانی اداروں کی کارکردگی میں بہتری آئی ہے اور یہ عمل دنیا بھر میں سب سے تیز رہا ہے۔

میگزین کے مطابق، بہتری کا یہ عمل پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی حکومت کی گزشتہ 36 ماہ کی کارکردگی کی نگرانی پر ریکارڈ کیا گیا۔

یہ نتائج ٹائمز ہائر ایجوکیشن کے دعوے کے مطابق ، دنیا بھر کے شریک اداروں کے 108 ملین حوالوں اور 430،000 ڈیٹا پوائنٹس کا جائزہ لینے کے بعد تیار کیے گئے تھے۔

ٹائمز ہائر ایجوکیشن نے 21 پاکستانی اعلیٰ تعلیمی اداروں کو دنیا کی اعلیٰ یونیورسٹیوں کی فہرست میں شامل کیا۔

پاکستانی اداروں کی فہرست میں شامل 21 یونیورسٹیاں ہیں۔ یہ پاکستان جیسے ترقی پذیر ملک کے لیے بہت بڑی کامیابی ہے۔ ٹائمز ہائیر ایجوکیشن نے کہا کہ پاکستان کی2021-22 کے اوسط اسکور میں تبدیلی ہندوستان سے بھی بہتر ہے۔

ٹائمز ہائر ایجوکیشن کے مطابق پاکستان کی پانچ یونیورسٹیوں نے اس سال ٹاپ 800 اداروں کی فہرست میں جگہ بنائی۔ اس کے علاوہ ، پاکستان نے بین الاقوامی نقطہ نظر اور صنعت کے روابط میں بہتری کے لیے عالمی سطح پر سرفہرست پانچ ممالک کی فہرست میں بھی جگہ بنائی۔

  لندن میں مقیم پبلی کیشن کے ذریعے ریکارڈ کردہ اعداد و شمار اشاعتوں، تدریسی شہرت، بین الاقوامی شریک تصنیف، تحقیق اور دیگر اشارے کے شعبوں میں نمایاں پیش رفت کو ظاہر کرتے ہیں۔

ٹائمز ہائر ایجوکیشن کے مطابق اس بہتری نے کئی یونیورسٹیوں کو اعلیٰ تعلیمی کارکردگی دکھانے والے اداروں کی فہرست میں شامل کیا ہے۔

وزیر اعظم عمران خان کے وژن کے مطابق پہلی بار ایک پاکستانی یونیورسٹی (یونیورسٹی آف ایگریکلچر فیصل آباد) کلائمیٹ ایکشن کے لیے عالمی سطح پر 24 ویں نمبر پر جگہ بنانے میں کامیاب رہی ہے۔ اسی طرح، نسٹ 67 ویں معروف یونیورسٹی ہے جو سستی اور صاف توانائی پر کام کر رہی ہے۔

 اس رینکنگ کے حوالے سے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے وزیرتعلیم شفقت محمود نے کہا کہ پچھلے 3 سال میں پاکستانی یونیورسٹیوں کی عالمی درجہ بندی میں سب سے زیادہ ترقی ہوئی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ابھی ہمیں بہت آگے جانا ہے۔  درست سمت میں اچھی رفتار کے ساتھ آگے بڑھنا ہے۔

وزیر تعلیم نے کہا کہ یہ کریڈٹ پی ٹی آئی حکومت کو جاتا ہے جس نے 2018 میں اقتدار سنبھالنے کے بعد سے تعلیم پر توجہ مرکوز کی ہے اور ان یونیورسٹیوں کو بھی جنہوں نے ہمیں فخر کیا ہے۔

تمام اہم ہائر ایجوکیشن انڈیکیٹرز کے علاوہ، ٹائمز نے پہلی بار پاکستان سے 36 یونیورسٹیوں کو اس سال امپیکٹ رینکنگ میں رکھا ہے۔

ٹائمز نے کہا کہ 2022 کے لیے اپنی مجموعی درجہ بندی میں ، پاکستانی یونیورسٹیاں توقع سے کہیں زیادہ تیزی سے ترقی کی سیڑھی چڑھ رہی ہیں، خاص طور پر پچھلے تین سال میں پاکستانی یونیورسٹیوں نے تیزی سی ترقی کی ہے۔

یونیورسٹیوں کی عالمی درجہ بندی کے مطابق دنیا کی بہترین قرار دی گئی 1600 یونیورسٹیوں میں برطانیہ کی 101 اور چین کی 97 یونیورسٹیاں شامل ہیں۔ دنیا کی ٹاپ 800 میں پاکستان کی سات یونیورسٹیاں شامل ہیں۔

Courtesy: Campusguru

Leave a Reply

Your email address will not be published.